Rehmat

 

ایک لقمہ منہ سے معدے میں اتارنے کے لئے رب العالمین نے اتنا اہتمام کیا ہے کہ اگر گرم ہے تو چھوتے ہی پتہ چل جاتا ہے، تازہ یا باسی ہے تو سونگھنے کی حِس بتادیتی ہے، کڑوا ہے، ترش ہے یا مرچ مصالحہ زیادہ ہے تو چکھنے کی حِس سے پتہ چل جاتا ہے سخت ہے تو دانت بتادیتے ہیں الغرض ایک لقمہ معدہ تک پہنچانے کے لئے اس قدر انتظام و اہتمام و حفاظت کی گئی ہے، اس سب کے باوجود بھی کوئی ثقیل شے حلق سے اتر ہی جائے تو معدہ میں اس کو گلانے کے لئے تیزابی مادّے موجود ہوتے ہیں،  یا پھر خود کار نظام کے تحت خوراک اُلٹی/متلی کی صورت میں واپس ہوجاتی ہے یہ سب انتظام رب العزت نے انسان کو محض کھلانے کے لئے کیا ہے، پلانے کی تفصیل علیحدہ ہے۔

الحمدلله رب العالمین ۔۔۔۔۔!!!!!

 قرآن پاک میں باری تعالیٰ ارشاد فرماتے ہیں:

’’اے لوگو!  زمین میں جو حلال پاکیزہ چیزیں ہیں وہ کھاؤ اور شیطان کے نقشِ قدم پر نہ چلو، یقیناوہ تمہارا کھلا دشمن ہے۔‘‘ (البقرۃ:168 )

الله تبارک وتعالیٰ سے دعا ہے کہ ہمیں لقمہ حرام سے بچائے۔۔۔ آمین یارب العالمین ۔۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *